اردو میں الف

Wednesday,17 December 2008
از :  
زمرات : پاکستان, اردو

جب آپ پنجاب سے کراچی جائیں اور بتیاں دیکھنے کے شوق میں کسی ایک بھی ہورڈنگ بورڈ اور اشتہارات کو پڑھے بغیر نظر سے اوجھل مت ہونے دیں تو ایک اضافی “الف” سے (پنجابی کم از کم اسے اضافی سمجھتے ہیں) سے آپ کا واسطہ پڑے گا ۔

ہر وہ لفظ جو انگریزی حرف “S” سے شروع ہوتا ہے کو لکھتے وقت کراچی میں الف سے اور پنجاب میں “س” سے شروع کرتے ہیں مثلاً پنجاب میں سکول کراچی جا کر اسکول بن جاتا ہے، سٹیٹ کراچی میں اسٹیٹ اور سنوکر کلب کراچی میں اسنوکر کلب بن جاتا ہے ۔

حتیٰ کہ پنجاب میں درسی کتب میں بھی اس اضافی الف کو نہیں لکھا جاتا، اس بارے میں قاعدہ قانون کیا کہتے ہیں؟

تبصرہ جات

“اردو میں الف” پر 14 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. انگریزی لفظ “ایس” کی آواز غالبا اردو کے سین کی آواز سے مختلف ہے خاص طور پر جب “ایس” سے کسی لفظ کا آغاز ہو. مناسب ٹرانسلٹریشن کے لیے اضافی الف لگایا جاتا ہے اسی لیے اردو کا اسکول انگلش بولنے والوں کے زیادہ قریب ہے بنسبت جب پنجابی میں سکول بولا جاتا ہے. کیونکہ اردو میں س کی آواز براہ راست شروع ہوتی ہے جیسے سانپ.. لیکن انگریزی ایس کی آواس براہ راست نہیں ہے بلکہ کچھ آغازی آواز بھی ہے جس کی کمی الف لگا کر پوری کی جاتی ہے.
    نوٹ : یہ صرف میرا قیاس ہے .. میں لسانیات کا طالب علم نہیں نہیں 🙂

  2. انگریزی کے ایس کی آواز ایسی ہوتی ہے جیسے سین کی آواز سرکی لینے میں ہے یعنی اسے تھوڑا سا لمبا کرنا ہوتا ہے کہ اس کی آواز انگریزی کے سی سے مختلف ہو ۔ سب اردو بولنے والے نہیں صرف کچھ اردو بولنے والے اضافی الف استعمال کرتے ہیں ۔ ہمارے ساتویں آٹھویں کے اردو کے استاذ کی مادری زبان اردو تھی یہ 1951 کی بات ہے ۔ ایک لڑکا پڑھتے ہوئے اسکول پڑھ گیا تو استاذ نے اس وقت تک اسے نہ چھوڑا جب تک اس نے سکول نہیں کہا اور اس کے لئے اسے دو تین تھپڑ بھی کھانا پڑے

  3. اجمل صاحب میرا خیال ہے ماسٹر صاحب زیادتی کرگئے کیونکہ ہمارے تو کافی عمر رسیدہ عزیز بھی الف کے ساتھ ہی انگریزی کے تمام ایس سے شروع ہونے والے الفاظ بولا کرتے ہیں. بلکہ اتر پردیش سے ہجرت کرکے آنے والے تو مزید طویل الف بولا کرتے ہیں.
    کافی سارے ادیب بھی اسکول ہی استعمال کرتے آئے ہیں لیکن اس میں ویسے ہی دو رائے ہیں جیسی طوطا اور توتا کے سلسلے میں ہیں مگر یہ صرف انگریزی الفاظ کے ساتھ ہے اردو الفاظ میں جھگڑا نہیں.

  4. اچھا، ہمارے ہاں “اسکول” اور “اسنوکر” جیسے الفاظ “الف” کے بغیر لکھنے کو غلط جانا جاتا ہے یا لکھا نہیں جاتا بلکہ کہتے ہیں، یہ کون سا نیا لفظ بنایا ہے، سَ کُو ل.
    بھئی اگر الف لکھنا نہیں ہوتا تو S کو بھی ‘س’ لکھ کر چھوڑ دیں نا. “ایس” کیوں لکھتے ہیں 😉
    خیر، یہ اتنا بڑا بھی کوئی مسئلہ نہیں. کہتے ہیں کہ انگریزی کو جب اردو حروفِ تہجی میں لکھا جائے تو چوں کہ کوئی قواعد و ضوابط نہیں اس لیے اپنے اپنے حساب سے لکھا جاسکتا ہے.

  5. ڈفر says:

    ہسپتال اور اسپتال بھی
    سٹیشن اور اسٹیشن بھی
    اور اجمل انکل کی بات پر یاد آیا کہ ہماری کلاس میں ایک لڑکا آیا آٹھویں میں وہ کراچی کو کرانچی کہتا تھا۔ اور ابھی جب میں کراچی گیا تو وہاں بھی ایک بندہ کرانچی کہتا تھا کراچی کو 😀

  6. میں نے تو کراچی کے ایک صاحب کو بھوک کو بھونک لکھتے بھی دیکھا ہے باقی میں‌کراچی نہیں‌گیا اس لیے زیادہ معلومات نہیں‌

  7. باسم says:

    مزے کی بات ہے کہ ہمارے کراچی والے دوست اس پر ہمیں چھڑتے بھی ہیں کہ پنجابی الف کھا جاتے ہیں اس کیلیے ان کے پاس مثال جوید کی ہے جو اصل میں جاوید ہے۔
    ان کے خیال میں پنجاب جاکر الف غائب ہوجاتا ہے جبکہ آپ کے خیال میں کراچی آکر بڑھ جاتا ہے۔
    اس مسئلہ کو یوں بیان کیا جاسکتا ہے کہ انگریزی کا لفظ ساکن شروع ہوتا ہے جبکہ دیگر زبانوں اردو عربی وغیرہ میں ساکن سے لفظ شروع نہیں کیا جاتا لہذا پنجابی سین ہی کو حرکت دے دیتے ہیں جبکہ کراچی والے سین کو ساکن رکھ کر متحرک الف لے آتے ہیں۔

  8. سرکاری لغت میں یہ الف کے ساتھ ہی ہے
    http://www.crulp.org/oud/viewword.aspx?refid=1081

    http://www.crulp.org/oud/viewword.aspx?refid=933

    بطور اردو”اسپیکر” میں یقین دلاتا ہوں کہ آپ کو الف کا استعمال کرنا ہوگا ورنہ ہماری طرف سے مذاق اڑائے جانے کی پوری گارنٹی ہے p:

  9. محمد وارث says:

    اس قضیے کی طرف توجہ مشتاق احمد یوسفی نے شاید ‘زرگزشت‘ میں بھی دلائی ہے۔ میرے خیال میں بھی ‘اسکول‘ وغیرہ ہی صحیح ہیں!

  10. وجی says:

    میں کراچی کے علاوہ پیجاب میں بھی کچھ سال پڑھا ہوں
    میرے خیال میں الف کا نہ لکھنا پنجابی لہجاھ بھی ہے

    پی ٹی وی پر جب کوئی لاہوریا اسلام آباد سے ٹرانسمیشن آتی تھی تو عمعوما آپ لوگوں نے دیکھا ہوگا کہ سٹودیو لکھا ہوتا تھا اور کراچی سے اسٹودیو لکھا آتا تھا

  11. راشد آپ جی بھر کر مذاق اڑائیں، ہم کونسا پیچھے ہیں اس معاملے میں . اب لغت چاہے جو مرضی کہے ہم سے الف نہیں فٹ ہوتا 😀

  12. دوست says:

    بطور لسانیات کا طالب علم ہونے کے یہ یقین دلا سکتا ہوں کہ سکول اور سنوکر کے شروع میں الف انگریز بھی نہیں پڑھتے اور بولتے.
    (US) IPA: /sku:l/, /ˈsku.əl/
    وکشنری سے اس کا تلفظ کاپی کررہا ہوں. یہاں شروع میں یا تو س کی آواز ہے یا پھر کوما زور دینے کو ظاہر کررہا ہے. الف کہیں نہیں.

  13. اردو كا اضافی ‘ا’ ویسا ہی ہے جیسے پنجاب میں ‘س’ سے شروع ہونے والےالفاظ پر بولتے وقت اضافی زبر لگایا جاتا ہے ۔

  14. یمارے یہاں لاہور میں اردو بھی اکثر بنجابی لہجے میں بولی جاتی ہے. آپ اردو بولتے ہوئے لاہوری کو دیکھ کہ پیچان سکتے ہیں کہ وہ لاہوری ہی ہے.

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔