تنہايي

Tuesday,1 February 2005
از :  
زمرات : میری پسند, اردو

ديپک راگ ہے چاہت اپني، کاہے سنايں تمہيں

ہم تو سلگتے ہي رہتے ہيں، کاہے سلگاييں تمہيں

ترکِ محبت ترکِ تمنا کر چکنے کے بعد

ہم پہ يہ مشکل آن پڑي ہے کيسے بھلاييں تمہيں

دِل کے زخم کا رنگ تو شايد آنکھوں ميں اتر آيے

روح کے زخموں کي گہرايي کيسے دکھايں تمہيں

سنّاٹا جب تنہايي کے زہر ميں گھلتا ہے

دو گھڑياں کيسے کٹتي ہيں،کيسے بتايں تمہيں

تبصرہ جات

“تنہايي” پر 3 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. Nadeem says:

    دِل کے زخم کا رنگ تو شايد آنکھوں ميں اتر آيے
    روح کے زخموں کي گہرايي کيسے دکھايں تمہيں
    سنّاٹا جب تنہايي کے زہر ميں گھلتا ہے
    دو گھڑياں کيسے کٹتي ہيں،کيسے بتايں تمہيں

    wah, mujhey yeh do ashaar bohat pasand aae hain:)
    aur nippi, chanda jahan tuk mera khayal hai ghazal ka kabhi unwaan nahin hota hai. ub i dont know ke yeh tum nazam ke tor per likh rahey ho ke nahin:) but mujhey to ghazal hi feel hui hai:)

    but very nice and I want this to be posted on PKF with immidiate affect:P.

  2. Anonymous says:

    very nice!

    try to be happy
    farva

  3. جہانزيب says:

    @ nadeem bhai mujhay bhi pasand hain aur doosri baat kay yeh meri apni ghazal nahi hai haan Unwaan tau iska bhi koi nahi hai magar post ka Unwaan tau barhal rakhna hi thaa tau maine soch moch ker tanhai rakh diya
    tay teesri baat yeh hai k yeh PKF pay november main post ki thee

    @ farva jo rotay howay shair sunaey tau iska matlab yeh nahi hota k he is not happy
    i’m Happy MashALLAH
    thanx for you concern 🙂

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔