اے عشق ہميں برباد نا کر

Sunday,20 March 2005
از :  
زمرات : میری پسند, موسیقی, اردو

اے عشق نا چھيڑ آ آ کے ہميں
ہم بھولے ہووں کو ياد نا کر
پہلے ہی بہت ناشاد ہيں ہم
تو اور ہميں ناشاد نا کر
قسمت کا ستم ہی کم نہيں کچھ
يہ تازہ ستم ايجاد نا کر
يوں ظلم نا کر بے داد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

جس دن سے ملے ہيں دونوں کا
سب چين گيا آرام گيا
چہروں سے بہارِ صبح گئی
آنکھوں سے فروغِ شام گيا
ہاتھوں سے خوشی کا جام چھوٹا
ہونٹوں سے ہنسی کا نام گيا
غمگيں نا بنا ناشاد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

راتوں کو اٹھ اٹھ روتے ہيں
رو رو کر دعايئں کرتے ہيں
آنکھوں ميں تصور دل ميں خلش
سر دھنتے ہيں آہيں بھرتے ہيں
اے عشق يہ کيسا روگ لگا
جيتے ہيں نا ظالم مرتے ہيں
يہ ظلم تو اے جلاد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

يہ روگ لگا ہے جب سے ہميں
رنجيدہ ہوں ميں بيمار ہے وہ
ہر وقت تپش ہر وقت خلش
بے خواب ہوں ميں بيدار ہے وہ
جينے سے ادھر بے زار ہوں ميں
مرنے پہ ادھر تيار ہے وہ
اور ضبط کہے فرياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

بے درد ذرا انصاف تو کر
اس عمر ميں اور مغموم ہے وہ
پھولوں کی طرح نازک ہے ابھی
تاروں کی طرح معصوم ہے وہ
يہ حُسن ستم يہ رنج غضب
مجبور ہوں ميں مظلوم ہے وہ
مظلوم پہ يوں بے داد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

اے عشق خدارا ديکھ کہيں
وہ شوخ حسيں بدنام نا ہو
وہ ماہ لقا بدنام نا ہو
وہ ذہرہ جبيں بدنام نا ہو
ناموس کا اس کو پاس رہے
وہ پردہ نشيں بدنام نا ہو
اُس پردہ نشيں کو ياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

اميد کی جھوٹی جنت کے
رہ رہ کے نا دکھلا خواب ہميں
آيندہ کی فرضی عشرت کے
وعدے سے نا کر بے تاب ہميں
کہتا ہے زمانہ جس کو خوشی
آتی ہے نظر کمياب ہميں
چھوڑ ايسی خوشی کو ياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

دو دن ہی ميں عہدِ طفلی کے
موسم زمانے بھول گئے
آنکھوں سے وہ خوشياں مٹ سی گئيں
لب کے وہ ترانے بھول گئے
اُن پاک بہشتی خوابوں کے
دلچسپ فسانے بھول گئے
اُن خوابوں سے يوں آزاد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

آنکھوں کو يہ کيا آزار ہوا
ہر جذبِ نہاں پر رو دينا
آہنگِ طرب پہ جھک جانا
آوازِ فغاں پر رو دينا
بربت کی صدا پر رو دينا
مطرب کے بياں پر رو دينا
احساس کو غم بنياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

جی چاہتا ہے اک دوسرے کو
يوں آٹھ پہر ہم کريں
آنکھوں ميں بسايئں خوابوں کو
اور دل کو خيال آباد کريں
خلوت ميں بھی ہو جلوت کا سماں
وحدت کو دوئی سے شاد کريں
يہ آرزويں ايجاد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

وہ راز ہے يہ غم آہ جيسے
پا جائے کوئی تو خير نہيں
آنکھوں سے جب آنسو بہتے ہيں
آ جائے کوئی تو خير نہيں
ظالم ہے يہ دنيا دل کو
يہاں بھا جائے کوئی خير نہيں
ہے ظلم مگر فرياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

دينا کا تماشہ ديکھ ليا
غمگيں سی ہے بے تاب سے ہے
اميد يہاں ايک وہم سی ہے
تسکين يہاں ايک خواب سی ہے
دنيا ميں خوشی کا نام نہيں
دينا ميں خوشی ناياب سی ہے
دينا ميں خوشی کو ياد نا کر
اے عشق ہميں برباد نا کر

تبصرہ جات

“اے عشق ہميں برباد نا کر” پر ایک تبصرہ ہوا ہے
  1. سا ئر ہ عنبر ین says:

    Very Nice 😀

    اللہ آپ کے حال پر رحم فرما ئے۔ آمین

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔