سالِ نو مبارک

Wednesday,2 January 2008
از :  
زمرات : میری زندگی

میری طرف سے سب سالِ نو کی مبارک باد قبول فرمائیں ۔ گزرا سال کیسا گزرا؟ میرے لئے پچھلا سال شائد اب تک کی زندگی کا سب سے بُرا سال ثابت ہوا ہے، جو جو بھی سوچا اُس میں سے نوے فی صد جوں کا توں ہی موجود ہے، امید ہے کہ یہ سال، گزشتہ سال سے بہتر ہو گا، امید پر دنیا قائم ہے۔ اِس سال کے لئے میری کوئی لمبی چوڑی ریزولیوشن نہیں، بس ایک ہی ریزولیوشن ہے کہ کچھ ہو جائے اپنی ازلی سُستی سے جان چھڑانی ہے ۔ اور اس سال کی سب سے پُرزور اُمید یہ ہے کہ بیگم یہاں آ جائے، دُعا کرنے سے آپ کا بھی کچھ نہیں جائے گا، دُعا کر دیجیے گا، کیوں کہ میرے زیادہ کام دعاؤں کے ہی مرہونِ منت ہیں ۔
اب اس سال کے آغاز کی طرف آتے ہیں، چار جنوری کو مطلب دو دن بعد مجھے جیوری ڈیوٹی کے لئے جانا ہے، ویسے تو میں بڑا پُرجوش ہوں جانے کے لئے بس دُعا یہ کہ زیادہ دن نہیں لگیں مقدمے میں، کیونکہ ابھی نئے سال کے آغاز کے ساتھ مجھ پر کچھ اضافی خرچ بھی پڑنے والے ہیں، اور جتنے پیسے محکمہ انصاف والے دیتے ہیں، اُس سے کام نہیں بننے والا۔ ویسے کتنے اچھے تھے دن جب نہ ہی اینورسری تھی نہ ہی یہ مؤا ویلنٹائنز ڈے کی فکر ۔ویسے جیوری ڈیوٹی سے جان چھوٹ سکتی ہے اگر میرا کسی جُرم میں ملوث ہونا ثابت ہو جائے ۔۔ محبت جرم ہے گر تو میں مجرم ہوں ۔ اللہ کرے جج میرا جرم مان لے ۔ دوسرا طریقہ کہ میں جس جگہ رہتا ہوں وہاں سے دوسرے علاقے میں چلا جاؤں ۔ بدتمیز کی ازلی خواہش ۔ لیکن اب یہ بھی ممکن نہیں ہے ۔ تیسرا طریقہ بقول میرے بھائی “ایکٹ لائک ڈمب” وکیل خود ہی کہہ دے گا مجھے یہ جیورر نہیں چاہیے ہے ۔
ہاں جیوری ڈیوٹی ہوتی کیا ہے؟ ہر امریکی شہری کو چار سال میں کم از کم ایک دفعہ عدالت میں جیورر کے طور پر فرائض ادا کرنا ہوتے ہیں ۔ جیوری ڈیوٹی کے لئے نام قرعہ کے ذریعے محمکہ انصاف والے نکالتے ہیں، اور حد ہے میرے گھر میں میرا نام تیسری دفعہ آیا ہے، پہلی دو بار چونکہ میں امریکی شہری نہیں تھا، اس لئے بچت ہو گئی تھی ۔ ہاں تو جیورر عموماً نو سے گیارہ تک ہو سکتے ہیں، جو عدالت میں پیش ہونے والے دونوں فریقین کا مقدمہ سنتے ہیں اور بعد میں شواہد کی بنیاد پر نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ آیا ملزم، مجرم ہے یا معصوم ہے ۔ مطلب یہ ہوا کہ ایک قسم کے جج، تو پھر جج کا کیا کام ہوتا ہے؟ اور اُنہی کے اخذ کردہ نتیجے پر کیس کا فیصلہ سُنایا جاتا ہے ۔ مطلب نہ صرف آپ انصاف کی فراہمی کے گواہ ہوتے ہیں بلکہ اُس کا ایک حصہ بنتے ہیں ۔
یہ میں نے وہ بیان کیا ہے جو مجھے پتہ تھا، باقی چار تاریخ کے بعد صیح طرح بتا سکوں گا کہ اصل میں ہوتا کیا ہے، بشرطیکہ کوئی وکیل میرے جیورر بننے پر اعتراض نہ کر دے ۔ اور ہاں نئے سال کی ریزولیوشن میں ایک اور بات یہ ہے کہ میں نے بلاگ کا ریویو لکھنا ہے ۔ پیوستہ رہ شجر سے، ہیں جی ۔

تبصرہ جات

“سالِ نو مبارک” پر 5 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. بدتمیز says:

    واقعی اس کی گواہی تو میں بھی دے سکتا ہوں کہ جوں کا توں ہی ہے۔
    جیوری ڈیوٹی دے کر سب کچھ تفصیل سے لکھیں۔ معلومات میں اضافہ ہو گا۔

  2. ضرور…روداد ضرور لکھیے گا. بیگم وہاں آجائے؟ لوگ ان سے یہاں تنگ ہیں آپ وہاں بلانے کی بات کر رہے ہیں..;).اس سال ایک عدد میرے ہاں بھی آنے والی ہے. 😛

  3. منڈا آدھا جج لگ رہا ہے…

  4. بدتمیز says:

    ایک میں‌ ہی رہ گیا ہوں 🙁

  5. ماوراء says:

    ساجد۔ واہ۔ مبارک ہو۔ شکر کریں ایک ہی آنے والی ہے۔ 😛

    ویسے آپ کو اتنی جلدی کیا ہے؟ دیکھیں نا بچے(بدتمیز) کا دل توڑ دیا ہے۔:D

    جہانزیب، نیا سال مبارک۔ اور دعا ہے کہ آپ کے تمام کام آسانی سے انجام پا جائیں۔

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔