بے پر کی

Sunday,1 May 2005
از :  
زمرات : کمپیوٹر, میری زندگی

بہت دن بعد آنا ہوا جو لوگ يہ بلاگ پڑھتے ہيں وہ سوچ رہے ہونگے کہ اسکی ہر تيسری پوسٹ اسی فقرے سے شروع ہوتی ہے ہا- ہا- ہا- تو اب کيا مصيبت تھی تو اس دفعہ مصيبت طبيعت کی ناسازی(کوئی نئی بات کرو) اور اسکے بعد کمپيوٹر کا دغا دے جانا تھا ۔ اصل ميں طبيعت کی نزاکت تو جب سے يہ مصرع پڑھا ہے تب سے مسلسل ہے

خدا جب حُسن ديتا ہے نزاکت آ ہی جاتی ہے

موسم کی تبديلی اور خاص طور پر جس طرح يہ يہاں تبديل ہوتا ہے ہميشہ ہی اس نازک طبيعت پہ گراں ہوتا ہے اب پچھلے ہفتے ہی کچھ ايسا موسم تھا کہ ايک دن درجہ حرارت ٨٣ تھا اور اگلے دن ٤٧ تو بندہ بيمار نا ہو تو کيا کرے اوپر سے بہار کی آمد ہے پولن الرجی اپنے جوبن پر ہے چھينکيں مار مار کر حالت غير ہے مگر اسکا ميں نے نفسياتی علاج کيا ہوا ہے جس کی وجہ سے تکليف کا احساس کم ہوتا ہے ميرا خيال ہے کہ جب انسان کو چھينک آتی ہے تو مطلب اسے کوئی ياد کر رہا ہے اور کون ياد کر رہا ہے اسکا بھی ذہن ميں خاکہ بنايا ہوا ہے مگر آپکو نہيں بتا رہا ابھی تو جب چھينک آتی ہے تو الٹا خوشی ہوتی ہے۔ اب انہی بيماری کی چھٹيوں ميں ايک دن نيو يارک کے بالائی حصہ جانے کا اور وہاں ايک ريذروائر ديکھنے کا اتفاق ہوا کچھ تصاوير اتاريں اور گھر آ کر سوچا چلو يہی بلاگ پر لگا ديتا ہوں اور ساتھ ہی سوچا کيوں نا اس دفعہ ہيلو کے ذريعے تصاوير ارصال کروں ہيلو انسٹال کيا مگر يہ کيا ہوا کہ کمپيوٹر بند ہو گيا اور اگر دوبارہ آن کرنے کی کوشش کرو تو بوٹ ہونے سے پہلے خود ہی بند ہو جاتا تھا مگر اللہ کا شکر ہے ٤ دن کی انتھک کوششوں کے بعد ابھی بالکل صيح کام کر رہا ہے اور ميں نے سوچا ہے کہ پرانا طريقہ تھوڑا لمبا ہے مگر ہيلو کو بھول جاوں فی الحال تو ابھی انشااللہ تصاوير ارصال کروں گا مگر پہلے اُنکو بلاگ کے ليے تھوڑا چھوٹا کرنا پڑے گا ہيلو کا يہ فايدہ ہے کہ وہ خود ہی يہ کام انجام ديتا ہے ليکن ابھی ميں ڈرا ہوا ہوں بعد ميں شايد دوبارہ ہيلو کو انسٹال کروں گا ۔
اللہ حافظ

تبصرہ جات

“بے پر کی” پر 16 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. Nabeel says:

    ہر روز نظر آتے ہیں وہ نئے روپ میں مجھ کو
    پڑتے رہتے ہیں میری صحت پہ اثرات مسلسل

    تمہارا بلاگ دیکھ کر میر ے ذہن میں یہی خیال آتا ہے۔ آخر کس طرح آئے دن اتنے لےآؤٹ بدل لیتے ہو، کچھ ہمیں بھی بتاؤ یا اردو وکی پر لکھ دو۔ امید ہے کہ تم اب بخیریت ہو گے۔ اب تم اپنے یاد کرنے والوں کو یاد کرنا شروع کر دو۔

  2. سا ئر ہ عنبر ین says:

    ميرا خيال ہے کہ جب انسان کو چھينک آتی ہے تو مطلب اسے کوئی ياد کر رہا ہے اور کون ياد کر رہا ہے اسکا بھی ذہن ميں خاکہ بنايا ہوا ہے……….aham aham yeh kia chakar hai:P

    hmm or aab blog par kuch decent look ayee hai 😉

  3. Anonymous says:

    oye hoye saira iz right…kuch tu hova hai..koi 8/9bar?abb kiya hova hai?thinking*

    miss mughal

  4. سا ئر ہ عنبر ین says:

    :rolling; @ 8/9

    aab overnite report required hai :frown;

  5. SHAPER says:

    sorry for the bad week …. lol

  6. منیراحمدطاہر says:

    جہانزیب صاحب بدلتے موسموں میں کہیں خود نہ بدل جانا — اور خاکہ بنا کر تکلیف کم کرنا اچھا آئیڈیا ہے بہرحال تصویروں کا انتظار رہے گا

  7. جہانزيب says:

    ارے نبيل بھائی يہ تو بہت آسان کام ہے اصل کام تو آب سر انجام دے رہے ہيں

    يہ چکر بتانا ہوتا تو بغير پوچھے بتا ديتا اور مطلب جو پہلا ٹمپليٹ تھا وہ ڈيسنٹ نہيں تھا

    مس مغل آپ اتنا مت سوچو آپکے دماغ کو آرام کی ضرورت ہے

    شہپر آپ عيادت کر رہے ہو يا مذاق اڑا رہے ہو

    طاہر بھائی موسم کے ساتھ تو اپنی ظاہری حالت تو بدلنا پڑتا ہے نا اور

  8. Hypocrisy Thy Name says:

    آپ نے چھینک کی جو اصطلاح کی اس سے مجھے بہت پرانی بات یاد آئی۔ جنوبی پنجاب کا ایک دیہاتی دسمبر میں راولپنڈی کی طرف روانہ ہوا۔ ریل گاڑی کے ڈبہ کی کھڑکی نظارے دیکھنے کے لئے کھلی رکھی۔ جہلم گذرنے کے بعد سردی جو لگی تو چھینک آئی۔ کہنے لگا “بھاگاں والی نے یاد کیتا اے” پھر چھینک آئی تو اس نے وہی کہا۔ پھر چھینک آئی تو اس نے وہی کہا۔ چھینکیں آتی گئیں حتہ کہ اس کا برا حال ہو گیا تو بولا “ہن بس وی کر مینوں جانوں لینا ای”

    یہ تو تھا مذاق۔ اب سنجیدہ بات آپ کی الرجی کی۔ ایک نہائت سادہ سا اور بے ضرر علاج جو میں نے کیا اور اللہ کے فضل سے ٹھیک ہو گیا۔ جب الرجی کا اثیک ہو جاۓ تو لیموں کی سکنجبین نمک اور چینی ملا کر بنائیں پانی ٹھنڈا نہ ہو۔ اسے بار بار پیتے رہیں۔ لیکن الرجی کا اثیک ہو نے سے پہلے اور بعد کھانے کے ساتھ سادہ دہی کھائیں اور جب بھی نہائیں تو اتنے تیز گرم پانی سے شروع کیں کہ جسم نہ جلے پھر پانی بتدریج ٹھنڈا کرتے جائیں حتہ کہ آخر میں پانی اتنا ٹھنڈا ہو جاۓ کہ سردی نہ لگے۔ اس کے علاوہ تیرنا آتا ہو تو روزانہ تیرا کریں۔ اگر تیرنا نہیں آتا یا اس کا بندوبست نہیں بند کمرہ میں ورزش کریں اور پسینہ آۓ تو تولیہ سے پونچھ دیں۔ ورزش کے بعد کسی طریقہ سے جسم کو ٹھنڈا کرنے کی کوشش نہ کریں اور جب تک جسم ٹھنڈا نہ ہو جاۓ نہ کھڑکی یا دروازہ کھولیں نہ کمرہ سے باہر نکلیں۔ چھ ماہ باقاعدگی سے کریں انشاء اللہ آپ کی الرجی ٹھیک ہو جاۓ گی۔

  9. جہانزيب says:

    جی ميرا بھی يہی خيال ہے مگر سوچ يہ رہا تھا کہ ميری ابھی تو شادی نہيں ہوئی ہے تو خاکہ بنانا پڑا ذہن ميں
    اور آپکی تجاويز پر انشااللہ عمل کرنے کی کوشش کروں گا اور شکريہ

  10. Anonymous says:

    asalam o alikum…sab sy pehly to ye k blog mein jo font style change kia ha….buhat acah lag raha ha…or read karny mein bhi prob nhi ho rahi……….its like…”comic sans ms ka urdu version” hahhaaaaaaaa

    likin yahan “tabsarey” parhny mein khasi dushwaree ka samna ha….bilkol nhi read ho rahy….

    bte nice “safar nama cum aap beeti” sort of thing….tab hi mein khaoun mujhy kion itni cheenkein ati hain:)

    tashfeen

  11. Hypocrisy Thy Name says:

    I want to follow the font you have used in your blog. Can you please help me, rather teach me how to do it.

  12. Zeeast says:

    hahahahahahahaha……
    aisa kabhi kabhi hujata hai….
    eik glass pani peejiye ……affaqa huga 🙂

    aur blog aap buhaat aaacha laag ra ha hai…..

  13. جہانزيب says:

    Paani peenay se chainkain nahi aati kya 😐
    and thanx for liking the lay out 🙂

  14. Harris - حارث says:

    oay hoay hoay…. 😉

  15. Zeeast says:

    nahi…..
    yahaan islamabad mnein bhi ye problem huta….but ALLAH ka shuker hai mujh nahi hai….
    but pani se affaqa hujata hai…. 😀

  16. Zeeast says:

    mera mutlab hai ke panni peene se ye joo aap khushfehmi numaa cheeze mein mubtella hein…..
    iss se jaan chuut jaye gee…..

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔