خبريں کچھ دلچسپ کچھ تلخ

Monday,30 May 2005
از :  
زمرات : کھیل, کمپیوٹر, امریکہ

اسلام و عليکم
کيسے ہيں آپ سب ميرے خيال ميں بہت کم لوگ آتے ہيں بلاگ پر اور ان ميں سے بھی چند ہی لوگ ہيں جو پڑھتے بھی ہيں۔ ايک تو ميرا بلاگ ہر دوسرے دن گوگل سے غائب ہو جاتا ہے نہيں تو گوگل سے بہت لوگ بھولے بھولے يہاں نکل آتے تھے۔
خير سوچا ويسے تو دن بھر خيالات آتے ہيں کہ يہ لکھوں گا بلاگ پر وہ لکھوں گا مگر زيادہ بار صرف خيالات ہی رہ جاتے ہيں جاب سے گھر آؤ تو حالت ” وقت کم اور مقابلہ سخت ” والی ہوتی ہے۔ اور ان دنوں بيس بال کا بھی ٹورنامنٹ جاری ہے اور ہم ٹھہرے نيويارک والے بيس بال کے شيدائی (جی جناب روم ميں رومنوں کی طرح رہو) محاورہ تو سنا ہی ہوگا نا آپنے بھی تو ہم بھی مجبورا سہی امريکی کھيل کے تھوڑے شوقين ہو گئے ہيں۔ بيس بال ميں نيويارک کی دو ٹيميں ہيں ايک مشہورِ زمانہ نيويارک ينکيز اور دوسری نيويارک مٹس۔ ينکيز نے چميئن شپ ٢٦ بار جيتی ہوئی ہے۔ اور جيسے پاکستان اور ہندوستان کا ميچ جو ہے ميچ کم اور جذبات زيادہ ہوتے ہيں اسی طرح ينکيز کے مقابل باسٹن کے ريڈ ساکس ہيں ريڈ ساکس نے پچھلے سال ينکيز کو چمپيئن شپ ميں شکست دی تھی اور يہ ريڈ ساکس کی چمپييں شپ ميں دوسری جيت تھی ١٩١٨ کے بعد۔ تو کل ريڈ ساکس نے ايک دفعہ پھر ينکيز کو شکستِ فاش دے کر ثابت کر ديا ہے کہ بے شک ينکيز کا نام بڑا ہے مگر ريڈ ساکس وقت کی چپميئن ٹيم ہے۔

اب آتا ہوں ايک تلخ خبر کی طرف کل ايک ٦٥ سالہ شخص جونئير ايلن ٣٥ سال جيل ميں گزار کر رہا ہوئے ہيں اور انکا جرم يہ تھا کہ انہوں نے ايک بليک اينڈ وائٹ ٹی وی چوری کيا تھا جس کی قانونی سزا ٣ سال ہے۔ اب انکو ٣٥ سال کی سزا کس ليے ہوئی کيونکہ وہ ايک گورا نہيں کالا تھا؟ اور جب يہ ترقی يافتہ لوگ اسلام کی سزاؤں کو غير انسانی کہتے ہيں تو اپنا گريبان کيوں نظر نہيں آتا ہے انکو۔ خير ميرے خيال ميں يہ ايک لا حاصل بحث ہے۔
اسی تناظر ميں مکيسکو کے صدر کی تقرير کا وہ حصہ ياد آ گيا جو انہوں نے پچھلے دنوں کی تھی اور کچہ يوں گويا ہوئے تھے ” مکيسکن امريکہ ميں وہ کام بھی کرتے ہيں جو امريکی کالے بھی کرنا پسند نہيں کرتے ” يہ ہم نسلی طور پر پتا نہيں کب ايک دوسرے کو رگيدنا ختم کريں گے۔
اب آتا ہوں نيويارک شہر کی انتظاميہ کے کچھ ايسے قوانين جن کو کا مقصد اگر آپکو سمجہ آئے تو ہميں بھی بتا ديں۔
نيويارک ميںجنگلی کبوتروں کی بہتات ہے جو آپکو ہر جگہ نظر آتے ہيں پارک ميں سڑکوں پر تو انتظاميہ نے فيصلہ کيا کہ جو لوگ انکو دانا ڈاليں گے انکو مبلغ ٥٠ ڈالر جرمانہ ادا کرنا ہو گا اور وجہ يہ بيان کی گئی کہ ان سے بيمارياں پھيلتی ہيں ۔ ليکن مختلف تنطيموں کا يہ کہنا ہے کہ جب انکو اچھا کھانا نہيں ديا جائے گا يقينا وہ کوڑا کھائيں گے اور بيمارياں تب پھيلں گی۔ اسکا نقصان ہمارے گھر ميں يہ ہوا ہے کہ جب روٹی بچ جاتی تھی تو ميری امی باقی روٹی کے ٹکڑے کر کے کبوتروں کو ڈال ديتی تھيں اب ہميں يا تو روٹی بجانا نہيں ہوتی اگر بچاؤ تو بعد ميں خود کھانا پڑتی ہے۔
يہ تو کافی پرانی بات ہو چکی ہے۔ مگر آج کچھ جديد قانون خبروں ميں سنے آپ بھی غور کريں۔
کچھ لوگ پارک ميں چھٹی والے دن درختوں کی صفائی کرتے ہيں ايک مشغلہ کے طور پر انکے نيچے جو سوکھے پتے ہوتے ہيں انکو ہٹاتے ہيں۔ تو جناب اگر ہاتھوں سے کرو تو ٹھيک مگر اگر بيلچہ يا اس طرح کے دوسرے اوزار آپ يہ سوچ کر استعمال کرو کہ کم وقت ميں زيادہ کام کر سکو تو آپکا چالان ہو سکتا ہے۔
بہت سے لوگ جو بلڈنگز ميں رہتے ہيں فائر اسکيپ کے پاس کھڑکی ميں گملے رکھ ديتے ہيں تو اس بات پر بھی آپکا چالان ہو سکتا ہے۔
آجکل گرمياں ہيں بہت سے لوگ جس دن دھوپ ہو بايسايکل لے کر پارک ميں چلاتے ہيں تو اگر اس پر گھنٹی نہيں ہے تو آپکو ٥٠ ڈالر جرمانہ ہو سکتا ہے۔
جی سب سے مزے دار جس کی زد ميں ہر نيويارکر آتا ہے۔ کوئی بھی اپنے گھروں ميں ايسا سسٹم نہيں رکھ سکتا جس پر فلم ديکھی جا سکے۔ مثلا ڈی وی ڈی پلئير وی سی آر۔ يہ قانون پرانا ہے مگر ابھی تک موجود ہے۔
اور آج يہاں ميموريل ڈے تھا جو کہ ان فوجيوں کی ياد ميں منايا جاتا ہے جو ڈيوٹی پر ملک کے ليے جاں نثار ہو گيے اس سے متلعق آپکو بلکے سب کو ہی روزمرہ ميں سننے کو مل جاتا ہوگا “آپکو ميموريل ڈے مبارک ہو” جو کہ ايک غلط جملہ ہے مگر لوگوں کو عادت ہو گئی ہے کہ ہر چھٹی خوشی ہی ہوتی ہے۔ مطلب آپ بتائيں اسکا کوئی مطلب بنتا ہے۔

Happy memorial Day
اللہ حافظ

تبصرہ جات

“خبريں کچھ دلچسپ کچھ تلخ” پر 11 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. سا ئر ہ عنبر ین says:

    hmmm interesting information 🙂

    i will wait for next bulletin 😛

  2. Anonymous says:

    hehehe good commentz saira ji..ye phar kar mujhay b yahee laga tha….abb hum ko b chahiyea k hum pakistan k karnamay bataye in americanz ko…

    for exmple….kal hum nai ek muhebul pakistani honay ka sabutt diyea…..kuch din pahlay mai apni family k saath store gayi hoyi thi…ek achi khasee larki…ju kuch faislay par thi…weo shampooz dhakh rahee thi..phir achanak ouss nai apnay bag mai dal liyea …jhaldee sai…phahlay tu mujhay samjh na aayi..mera dhamgh chakra giya…meri tu zuban baand ho gayi..jasay mai nai churee ki hai..abb meray haath kaamp rahay thea….k ek intni bhari larki choree..khair ouss store ki salezwomen nai ouss ko phakar liyea…aur weoha ek dam sab ekatay ho gay….kiyu k ouss k bag sai aur b cheezay niklee thi….meri bhabi kahty pagal tum ouss ka bata daity…

    lakin mai nai kaha poorgirl..lakin dhakinay mai tu richirich thi…lolz

    misbi

  3. Zeeast says:

    aap aapne aap ko barte shooq se american kehte hein…aur ye ithni asaan baatein samjh mein nahi aarahi….:)abhi tu aap ko inn taamam rules aur regulations ke sath use to huja na chahi ye tha….

    well Americans ke discremination ke bare tu mein jo pehle kehti ti woo aab bhi ke sub se ziyada opressive aur supressive nation hein ye loog…..

  4. Asma says:

    Assalam o alaykum w.w.!

    Aooh! Even DVD’s sort of appliances are not allowed so wat do u ppl do???

    How wise newyork law makers are … Big salute to them 🙂

    Felt so sorry for Junior allen !!

    Wassalam

    it was quite a post … having so many lil posts in it 🙂

  5. جہانزيب says:

    @Saira i can give you web links for local news of NY 😛

    @Misbi tum ko pakar liya chori kartay 😛

    @zeeast i am american pakistani i cant take out either of it .. well being an american i feel proud and as a pakistani i am prouder 😛 new word i guess

    @Asma asma it is an old law i believe when ppl had to go out to theater to watch movies to protect showbiz in early ages they might made this law but it still exist and imagine if someone give you ticket based on that law and says “This is The Law”
    but there are few new things with this new administration started giving tickets upon small things like if you sitting in the street on a crate of bottle using it as chair and enjoying sun..
    last year one pregnt woman get ticket cause she was sitting on subway stairs as she was feeling tired..new yorker gave name to this thing Bloomberg’s Ticket Blizerd you can searc for it online and will find out lot of funny incidents that no one looks them as criminol or breaking any law but city does think those were breaking of the law..
    Allah hafiz

  6. Anonymous says:

    hey Mr jahanzaib??????????mujh ko pakar liyea….thinking…mai tu kabhi nahi pakree gayii…choree kartay

    magar thinking

    misbi

  7. SHAPER says:

    hai! … thanks for give us such information. i think it will help me when i m visiting NY in summer.. Thanks…

  8. جہانزيب says:

    :rolling;
    miss mughal aap tajarba kar chor ho 😛
    aur shapar you welcome lol 😛

  9. Zeeast says:

    well…..jahanzaib…what ever i have said is just my personal experience…….and its normal that you figure out every thing according to your own way…..
    isn’t it……..????
    and your word is not new for me…..:P

  10. Anonymous says:

    pakistan..zinda baad…abb dhakay ji…ye wonderful country hai…abb dhakay…3/4 din sai humre daily light jaty hai……aur 4/5 hourz ka pata nahi hota…….k kab ana hai..kabhi subha aur kabhi raat…ehhhhh

    aur sab sai bhara zulam net b baad ho jata hai..aur weo mazeed 2/3hourz baad aata hai….lakin jinab
    Pakistan Zinda baad!!!

    miss mughal

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔