پاکستانیوں کا اغواء

Friday,12 May 2006
از :  
زمرات : پاکستان, نیو یارک, مذہب, سیاست

یونان نے بالاخر ایک سال بعد ان بارہ پاکستانیوں کے الزام کو درست مان لیا ہے جس میں انہوں نے یونانی سیکیورٹی اداروں پر الزام لگایا تھا کہ لندن دھماکوں کے بعد ان کو بے جاء حراست میں رکھا گیا تھا، جبکہ یونانی حکومت پہلے ان الزامات کو مضحکہ خیز قرار دے چکی ہے،
نو گیارہ کے بعد سیکڑوں لوگوں کو اسی طرح امریکی جیلوں کا منہ دیکھنا پڑ چکا ہے، جس میں محض شک کی بنیاد پر آپکو حراست میں لیا جا سکتا ہے اور اس پر یہ کہ آپ کسی عدالت کا دروازہ بھی نہیں کھٹکھٹا سکتے کیونکہ اس کو پیٹریاٹ ایکٹ جو کہ اب قانون بن چکا ہے کی حمایت حاصل ہے، عموما اس طرح جن لوگوں کو حراست میں لیا جاتا ہے وہ بجایے عدالت جانے کے چپ رہنے کو ترجیح دیتے ہیں، جیسے ہمارے سردار پڑوسی جو دو دن حراست میں رہے اور بعد میں گھر آ گیے۔
اس سلسلے میں سب سے مشہور واقعہ کوینیز میں رہنے والے ایک سردار جی کا ہے جن کو نو گیارہ کے بعد حراست میں لیا گیا تھا اور آٹھ مہینے بعد رہا کر دیا گیا، لیکن بجایے چپ رہنے کے انہوں نے عدالت جانے کا فیصلہ کیا اور اپنا کیس جیتا، اسی طرح دو سال پہلے مین ہیٹن میں ایک پاکستانی ٹیکسی ڈرایور کو تصویریں کھنچنے پر حراست میں لیا گیا اور اس کا تعلق القایدہ سے جوڑ کر کہا گیا کہ وہ اپنے ٹارگٹ کی تصاویر اتار رہا تھا، بعد میں اسکے بھایی نے جب مقدمے کی پیروی کی تو حراست میں لیے گیے شخص کو امیگریشن قانون کی خلاف ورزی کرنے کا مرتکب قرار دے کر ڈی پورٹ کر دیا گیا، اللہ اللہ تے خیر سلا
لیکن افسوس یہ ہے کہ پاکستانی حکومت اپنے شہریوں کی پیروی کیوں نہیں کرتی؟

تبصرہ جات

“پاکستانیوں کا اغواء” پر 2 تبصرے کئے گئے ہیں
  1. شعیب صفدر says:

    یہ اہل پاکستان کی بد قسمتی ہے کہ انہیں نا صرف غیر بلکہ اپنے بھی اغواء کرتے ہیں!!!! ملک میں سیاست دانوں، فوج، چند نا نہاد سیاسی مولوی، این جی او اور دیگر اور ملک کے باہر ان ممالک کی پولیس!!!!

  2. Anonymous says:

    afsoos az hud afsoos!!!

    lekin bharay afsoos k saath ye kahna phar raha hai..k pakistan mai pakistani ko koi tahfuz hasil nahi hai….tu bahir walo ka kiya karay.

    har aye din hugamay hotay hain kabhi khud kash humley…kabhi kuch aur kabhi kuch!!

    lalah

تبصرہ کیجئے

اس بلاگ پر آپ کے تبصرہ کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے
اگر آپ اپنے تبصرہ کے ساتھ تصویر لگانا چاہتے ہیں، تو یہاں جا کر تصویر لگائیں ۔